پاکستان اس وقت معاشی طور پر نازک دور سے گزر رہا ہے، وزیراعظم کا یوم مزدور پر بیان

یکم مئی مزدوروں کے عالمی دن کے موقع پر وزیراعظم محمد شہباز شریف نے پیغام میں کہا کہ ہم آج ملک کے تمام محنت کشوں کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں جو رزق حلال کے حصول کی خاطر کھیتوں، کھلیانوں، کارخانوں اور مختلف شعبوں میں محنت سے دن رات پاکستان کی معیشت اور تعمیر و ترقی میں اپنا اہم کردار ادا کر رہے ہیں۔

وزیراعظم نے کہا کہ مزدور نہ صرف اپنے خاندان کا پیٹ پالنے کے لیے دن رات محنت کرتے ہیں بلکہ پاکستان کی تعمیر و ترقی کے لیے بھی اپنا خون پسینہ بہاتے ہیں۔ پاکستان مسلم لیگ ن کے منشور کے مطابق ہم پاکستانی افرادی قوت کے حقوق کے فروغ اور مزدوروں کی فلاح وبہبود کے لیے اقدامات اٹھا رہے ہیں۔ ہم گھریلو ملازمین کیلئے قانون سازی کو بین الاقوامی معیار کے مطابق بہتر بنانے کے لیے پر عزم ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہماری حکومت کی اولین ترجیح مختلف شعبوں میں لوگوں کی صحت اور حفاظت کو یقینی بنانا ہے، اس مقصد کے لیے ہم جلد ہی ایک قومی لیبر کانفرنس کا اہتمام کریں گے۔ اس کے علاوہ، کان کنی کے حوالے سے 176 ویں بین الاقوامی تنظیم برائے لیبر کے کنونشن کی توثیق کے لیے بھی حکومتی سطح پر اقدامات کیے جا رہے ہیں، جس کا مقصد کان کنوں کے کام کے دوران انکی حفاظت اور صحت کو یقینی بنانا ہے۔

وزیر اعظم شہباز شریف کا کہنا تھا کہ پاکستان کے معاشی حالات اس وقت انتہائی نازک ہیں، جبکہ موجودہ مہنگائی نے مزدور طبقے کو سب سے زیادہ متاثر کیا ہے، اس لیے حکومت خصوصی سبسڈیز، سماجی تحفظ اور غربت کے پروگراموں کے ذریعے معاشی مشکلات کو حل کرنے کی بھرپور کوشش کر رہی ہے۔

انکا مزید کہنا تھا کہ ہم کم لاگت رہائش، مفت تعلیم، صحت اور سماجی تحفظ کے اقدامات کے ذریعے مزدوروں کی بہتری کو مزید فروغ دے کر انکے حالاتِ زندگی کو مزید بہتر بنانے کے لیے کوششیں جاری رکھیں گے۔ ہم مزدور دوست پالیسیوں اور اقدامات کے ذریعے یقینی بنائیں گے کہ مزدوروں کو زرق حلال کے حصول کے لیے مناسب ماحول میسر ہو۔ ہمارے مزدور پاکستان کی طاقت بنیں گے انشاء اللّٰہ۔

وزیراعظم نے کہا کہ میں خاص طور پر ان خواتین کی عظمت کو سلام پیش کرتا ہوں اور انکے حوصلے و عزم کی داد دیتا ہوں جو اپنے خاندان کیلئے روزگار کے حصول کے لیے مردوں کے ساتھ شانہ بشانہ کام کر رہی ہیں۔ اسکے علاوہ پاکستان کی پائیدار اقتصادی ہماری حکومت کی اولین ترجیح ہے لہذا معیشت کو بحال کرنے کے لیے ہمیں مستقل مزاجی سے بھرپور محنت کرنی ہو گی۔

آخر میں وزیراعظم نے پیغام میں کہا کہ مجھے امید ہے کہ مالی و اقتصادی استحکام کے موجودہ رجحان کے نتیجے میں معاشی سرگرمیاں مزید بڑھیں گی اور روزگار کے مزید مواقع دستیاب ہوں گے۔ نئے روزگار کے مواقع سے فائدہ اٹھانے کے لیے ہمیں ہنرمند اور باصلاحیت افراد کی ضرورت ہو گی۔ حکومت نے پاکستانی نوجوانوں کو بین الاقوامی معیار پر لانے کے لیے مختلف منصوبے شروع کیے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں