پاکستان کرکٹ ٹیم کے لیے غیر ملکی کوچز کے ناموں کا اعلان

پی سی بی ہیڈ کوارٹرز لاہور میں پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیئرمین محسن نقوی نے اظہر محمود کے ہمراہ پریس کانفرنس کی جس میں انہوں نے پاکستان کرکٹ بورڈ کے نئے کوچز کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ جین گلیسی کو ریڈ بال اور گیری کرسٹن کو وائٹ بال کوچ مقرر کیا گیا ہے، جبکہ اظہر محمود ٹیم کے اسسٹنٹ کوچ ہوں گے، ہم دنیا کے مشہور اور تجربہ کار کوچز لا رہے ہیں۔

چیئرمین پی سی بی نے کہا کہ اظہر محمود دونوں فارمیٹ کے لیے قومی ٹیم کے اسسٹنٹ کوچ ہوں گے جو وائٹ بال اور ریڈ بال دونوں ٹیموں کو ایکسٹرا سپورٹ فراہم کریں گے، اظہر لندن میں ایک اچھی جاب چھوڑ کر پاکستان آئے ہیں اور ان کا مقصد ٹیم کی کارکردگی کو بہتر بنانا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان کرکٹ بورڈ کا اصل مقصد پیسے اکٹھے کرنا نہیں ہے بلکہ ان پیسوں کو کھیل پر لگانا ہے، سٹیڈیمز کی اپ گریڈیشن کا کام تیزی سے ہو رہا ہے، پاکستان کے کرکٹ سٹیڈیمز میں تمام ممکنہ سہولیات فراہم کریں گے، 7 مئی کو ہماری انٹرنیشنل بڈ ہے جس میں انٹرنیشنل اسٹیڈیمز کا تجربہ رکھتے والی کمپنیاں شامل ہوں گی، ہم تاخیر کا شکار ہیں لیکن جلد از جلد کام مکمل کریں گے۔

محسن نقوی نے فاسٹ بولر احسان اللہ کی انجری کے حوالے سے کہا کہ شکایت آئی ہے کہ انکی انجری ابھی ٹھیک سے تشخیص نہیں ہوئی، ان کا بیرون ملک سے کروایا جا رہا ہے، منگل یا بدھ تک پینل کی رپورٹ آجائے گی، ابھی اس پر کوئی تبصرہ نہیں کروں گا مگر جو بھی ذمہ دار ہو گا اس کے خلاف سخت ایکشن لیا جائے گا، ہمارے لیے سب کرکٹرز اہم ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ویمن کرکٹ ٹیم کے کوچ کا بھی جلد اعلان کریں گے، ویمن کرکٹ کو برابری پر اوپر لائیں گے، فزیو تھراپسٹ کے لیے ڈیوائسز منگوائی ہیں، کل جب کوئٹہ قلات میں آندھی طوفان آیا تب لڑکے ٹیپ بال کرکٹ کھیل رہے تھے، دیوار گرنے سے کھلاڑی زخمی ہوئے جس میں سے 3 کی حالت تشویشناک ہے، ان کا علاج کروانا ہماری زمہ داری ہے۔

انہوں نے کراچی میں ویمن کرکٹرز کے ساتھ پیش آنے والے حادثے کے متعلق بات کرتے ہوئے کہا کہ کہ ہماری ویمن کرکٹرز بغیر بتائے کیمپ سے باہر گئیں تھیں، اور وہاں ان کا حادثہ ہوا اور وہ زخمی ہو گئیں، ہم نے اس معاملے پر کارروائی کی ہے اور ایک خاتون ایس ایس پی کو چیف سکیورٹی افسر مقرر کر دیا ہے، خواتین کرکٹرز کی سخت مانیٹرنگ ہو گی تا کہ ان کی حفاظت میں کوئی کمی نہ رہے۔

چیئرمین پی سی بی کا کہنا تھا کہ انٹرنیشنل پلیئرز کی فٹنس دیکھیں ہمارے پلیئرز کی فٹنس پر کبھی توجہ نہیں دی گئی لہذا ہمیں فٹنس پر کام کرنا ہو گا، ہم نے غیر ملکی کوچز کے ساتھ مقامی کوچز کا کمبی نیشن بنایا ہے، غیر ملکی کوچز کو لانے کا مقصد ٹیم میں بہتری لانا ہے، اگر کسی کھلاڑی کو انگلش نہیں آتی تو وہ سیکھے گا اور اظہر محمود ان کا ساتھ دیں گے.

اس موقع پر اظہر محمود نے کہا کہ میں پی سی بی کا شکریہ ادا کرتا ہوں کہ انہوں نے مجھ پر بھروسہ کیا اور قومی ٹیم کا کوچ منتخب کیا، میرا مقصد پاکستان ٹیم کو اوپر لانا ہے، پہلی مرتبہ دو غیر ملکی کوچز پاکستان آ رہے ہیں، ایسے میں میرا رول بڑا اہم ہو جاتا ہے.

اپنا تبصرہ بھیجیں