پاکستان کی ترقی میں کسی قسم کا عدم استحکام برداشت نہیں کیا جائے گا، آرمی چیف

اسلام آباد میں جمعہ کے روز گرین پاکستان انیشیٹیو کانفرنس کا انعقاد ہوا، جس میں آرمی چیف جنرل عاصم منیر، وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی و ترقی احسن اقبال، وفاقی وزیر برائے نیشنل فوڈ سیکیورٹی رانا تنویر حسین اور وفاقی وزراء سمیت اعلیٰ سول و عسکری حکام نے شرکت کی۔ سیاسی و عسکری حکام کی جانب سے غذائی تحفظ اور ترقی و خوشحالی کیلئے کوئی کسر نہ چھوڑنے کا عزم بھی کیا گیا۔

آئی ایس پی آر کے مطابق گرین پاکستان انیشیٹیو کانفرنس میں مختصر وقت میں حاصل کیے گئے اہداف سے متعلق آگاہ کیا گیا اور بریفنگ میں واضح کیا گیا کہ ماڈل فارمز، واٹر نیجمنٹ اسکیمز، ٹیکنالوجی اور سرمایہ کاری جیسے اقدامات کا مقصد غذائی تحفظ کو مضبوط بنانا اور زرعی پیداوار میں اضافہ کرنا ہے۔

کانفرنس میں وفاقی وزراء نے اس بات پر زور دیا کہ زراعت پاکستان کی لائف لائن ہے زراعت کو پاکستان کی لائف لائن قرار دیا اور کہا کہ انہیں امید ہے گرین پاکستان انیشیٹو کے ذریعے زراعت کیلئے جدید طریقے متعارف کروائے جائیں گے۔

گرین پاکستان انیشیٹیو کانفرنس میں آرمی چیف جنرل (ر) سید عاصم منیر نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہم سب مل کر ایک ٹیم پاکستان ہیں، اگر عوام ہماری مدد اور سپورٹ کرے تو ہم پاکستان کی ترقی کے سفر میں رخنہ ڈالنے اور توجہ ہٹانے والوں کی تمام کوششوں کو ناکام بنا سکتے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ منفی پروپیگنڈا اور سوشل میڈیا ٹرولز کی وجہ سے ملک و قوم کی ترقی اور خوشحالی میں رکاوٹیں نہیں آنے دیں گے، ہمیں مل کر ان منفی عناصر کو ناکام بنانا ہے، عوام کی مدد اور تعاون سے ان منفی ہتھکنڈوں کو شکست دی جا سکتی ہے۔

آرمی چیف کا کہنا تھا کہ آج کے دور میں بغیر معاشی استحکام کے خود مختاری کا تصور ناممکن ہے اور پاکستان کی خوشحالی و ترقی کے سفر میں کسی بھی قسم کا عدم استحکام برداشت نہیں کیا جائے گا۔ آئیں ہم سب مل کر منفی قوتوں کو رد کریں اور پاکستان کی ترقی و استحکام کے سفر پر مرکوز رہیں۔

آخر میں جنرل عاصم منیر نے کہا کہ پاکستان ایک باہمت قوم کی حامل زرخیز سرزمین ہے اور میں اپنی قوم کو یقین دلاتا ہوں کہ پاک فوج ملکی معاشی ترقی، جامع قومی سلامتی اور اجتماعی مفاد کیلئے ہرممکن کردار ادا کرتی رہے گی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں