پاکستان کا ایران اور اسرائیل سے تحمل سے کام لینے اور کشیدگی کو کم کرنے کی طرف بڑھنے کا مطالبہ

مشرق وسطیٰ میں جاری پیش رفت پر پاکستان کی جانب سے گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے ردعمل میں کہا گیا ہے کہ پاکستان مشرق وسطیٰ میں جاری پیش رفت کو گہری تشویش سے دیکھ رہا ہے

ترجمان دفترخارجہ نے ایران اسرائیل کے مابین شروع ہونے والی کشیدگی کے بارے میں تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ کئی مہینوں سے، پاکستان نے خطے میں دشمنی کی توسیع کو روکنے اور غزہ میں جنگ بندی کے لیے بین الاقوامی کوششوں کی ضرورت پر زور دیا ہے، 2 اپریل 2024 کو، پاکستان نے شام میں ایرانی قونصلر دفتر پر حملے کے خطرات کو پہلے سے ہی غیر مستحکم خطے میں ایک بڑی کشیدگی کے طور پر اشارہ کیا تھا

ترجمان دفترخارجہ کا کہنا تھا کہ آج کی پیش رفت سفارت کاری کے نہ ہونے کے نتائج کو ظاہر کرتی ہے، یہ ان صورتوں میں سنگین مضمرات کو بھی واضح کرتے ہیں جہاں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل بین الاقوامی امن اور سلامتی کو برقرار رکھنے کی اپنی ذمہ داریاں پوری کرنے سے قاصر ہے

پاکستان نے مطالبہ کیا کہ اب صورتحال کو مستحکم کرنے اور امن کی بحالی کی اشد ضرورت ہے تمام فریقین انتہائی تحمل سے کام لیں اور کشیدگی کو کم کرنے کی طرف بڑھیں

اپنا تبصرہ بھیجیں