غزہ میں غذائی قلت, امریکا کا فضا کے ذریعے سے غزہ میں امداد گرانے کا عمل شروع

غزہ: غذائی قلت کی وجہ سے ایک درجن سے زائد بچوں کی ہلاکت کے بعد امریکا نے فضا سے امداد گرانا شروع کردیا

امریکی فوج کے حکام کا کہنا تھا کہ ہم نے انسانی حقوق کی بنیاد پر غزہ میں فضا سے امداد گرانے کا کام شروع کیا, اس عمل میں امریکی فضائیہ کے تین سی 130 طیاروں نے حصہ لیا, تاکہ متاثرہ شہریوں کو کچھ ریلیف مہیا کی جاسکے

سماجی رابطوں کی ویب سائٹ پر امریکی سینٹرل کمانڈ نے پیغام دیا کہ یہ آپریشن اردن کی مدد سے سر انجام دیا گیا, جس میں طیاروں نے غزہ کی ساحلی پٹی کے قریب سے 38 ہزار سے زائد کھانے کے پیکٹ گرائے

غزہ سٹی کے علاقے زیتون سےتعلق رکھنے والے 28 سالہ ہشام ابو عید کا کہنا تھا کہ ہمیں آٹے کے 2 تھیلے ملے, ایک تھیلہ پڑوسیوں کو دیا, یہاں ہر کوئی غذائی قلت کا شکار ہے, امریکہ کی جانب سے یہ امداد بہت ہی نایاب ہے اور یہاں کے لوگوں کے لئے کافی نہیں ہے. قحط سے لوگ مر رہے ہیں

غزہ کی وزارت صحت کا کہنا ہے کہ اب تک 13 بچے غذائی قلت اور پانی کی کمی کی وجہ جاں بحق ہو گئے ہیں

دوسری طرف امریکی صدر جوبائیڈن نے کہا ہے کہ بھیجی گئی خوراک ضرورت سے کم ہے, تاہم مزید امداد فضا کے ذریعے سے پہنچائی جائے گی

اپنا تبصرہ بھیجیں