سٹوڈنٹس کی جانب سے پی آئی اے کے خلاف سوشل میڈیا پر احتجاج

پاکستان سے چائنہ واپس جانے کے خواہشمند چین میں زیر تعلیم پاکستانی سٹوڈنٹس کا پی آئی اے کے خلاف سماجی رابطوں کی ویب سائٹس پر شدید احتجاج جاری ہے سٹوڈنٹس کی جانب سے پی آئی اے سے مسلسل یہ مطالبہ کیا جا رہا ہے کہ کرایوں میں کم از کم 50 فیصد ڈسکاؤنٹ دیا جائے تاکہ سٹوڈنٹس واپس اپنے تعلیمی اداروں میں جاکر اپنی تعلیم مکمل کر سکیں

پی آئی اے کیا کہتا ہے؟؟؟

ترجمان پی آئی اے عبداللہ حفیظ خان نے گزشتہ روز ایم این بی اردو کو دئیے گئے انٹرویو میں کہا کہ چین کی جانب سے ابھی بھی سخت ایس او پیز کے تحت محدود پروازوں کی اجازت دی گئی ہے جس کے مطابق ہفتے میں ایک ہی فلائٹ 75 فیصد مسافروں کی گنجائش کے ساتھ چین جاسکتی ہے

زائد کرایوں کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ پی آئی اے ایک قومی ائرلائن ہے جس کا مقصد پیسے بنانا نہیں اپنے شہریوں کو سہولیات اور ریلیف پہنچانا ہے انہوں نے کہا کہ کورونا کے ایام میں چین میں پھنسے پاکستانی سٹوڈنٹس ہوں یا جنگ زدہ علاقوں میں پھنسے پاکستانی شہری، پی آئی اے کی جانب سے ہمیشہ ریسکیو آپریشن سمیت تمام تر ریلیف کی سرگرمیوں میں حصہ لیا گیا ہے تاہم عبداللہ خان کے مطابق پی آئی اے تاحال 22 فیصد ڈسکاؤنٹ ہی دے سکتا ہے جو کہ وزیر ہوا بازی خواجہ سعد رفیق کی خصوصی ہدایت پر دیا گیا ہے، انہوں نے کہا کہ جیسے ہی مزید چینی شہروں کے لیے مزید پروازوں کی اجازت ملے گی کرایوں میں واضع طور پر کمی آجائے گی

حکومت کیا کہتی ہے؟؟؟

اس ساری صورتحال میں ٹویٹر پر ہر طرف سٹوڈنٹس کی پوسٹس نظر آنے کے باوجود زیادہ تر حکومتی وزرا نظریں چرائے بیٹھے ہیں تاہم گزشتہ روز وفاقی وزیر تعلیم رانا تنویر حسین کی جانب سے سٹوڈنٹس کے ساتھ اظہار یکجہتی کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ پی آئی اے کی جانب سے زائد کرائے سمجھ سے بالاتر ہیں

رانا تنویر حسین ان دنوں بین الاقوامی ایجوکیشن سمٹ کے لیے امریکہ میں موجود ہیں تاہم ان کی جانب سے یہ یقین دہانی کروائی گئی ہے کہ وہ وطن لوٹتے ہی اس مسئلے کو متعلقہ وزیر کے سامنے اٹھائیں گے

سٹوڈنٹس کیا کہہ رہے ہیں؟؟؟

مختلف پریشانیوں کے شکار سٹوڈنٹس سوشل میڈیا پر کہیں حکومتی بے بسی کا رونا روتے نظر آتے ہیں تو کہیں دست بدستہ حکومت سے ملتمس ہوتے کہ وہ سٹوڈنٹس کی آواز کو سنیں اور کرایوں میں کمی کا اعلان کرے

حامد شاہ نامی صارف نے حکومت سے درخواست کی کہ وہ معاملے کا فوری ایکشن لیتے ہوئے سٹوڈنٹس کو چین واپس بھیجنے کا بندوبست کریں انہوں نے کہا کہ ہم اس قدر زائد کرائے برداشت نہیں کر سکتے

ڈاکٹر شاہ نامی صارف نے شکوہ کیا کہ قومی ائرلائنز ہمیشہ اپنے شہریوں کو سپورٹ کرتی ہیں تاہم ہماری قومی ائرلائن اپنے سٹوڈنٹس کو لوٹ رہی ہے، انہوں نے کہا کہ صرف 1 فیصد سٹوڈنٹس ہی ساڑھے پانچ لاکھ روپیہ ٹکٹ کے لئے دے سکتے ہیں، کیا ان کو تعلیم حاصل کرنا چھوڑ دینا چاہئے؟

https://twitter.com/Dr_shah_1/status/1572119646978842630?t=vA5QZcDXxgZubPPUXt94Cw&s=19

یاسر نامی صارف نے اس صورتحال میں سابق وزیراعظم عمران خان کو پکارا کہا کہ وہ سٹوڈنٹس کے مستقبل کو تاریک ہونے سے بچائیں

ماہ نور نامی سٹوڈنٹس نے تمام میڈیا ہاؤسز کو درخواست کی کہ وہ مشکل کی اس گھڑی میں پی آئی اے کے خلاف سٹوڈنٹس کا ساتھ دیں

عبدلراوف نامی سٹوڈنٹ نے وزیر اعظم شہباز شریف کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ وہ ٹکٹس کی قیمتوں میں کمی کے لئے پی آئی اے سے بات کریں

ڈاکٹر امیش نے لکھا کہ “چین جانے کے لیے ٹکٹ کی قیمت نا قابل براشت ہو چکی ہے: پاکستانی طلبہ کی وزیر اعظم سے کرایہ کم کرنے کی درخواست”

سٹوڈنٹس کی جانب سے وزیر خارجہ بلاول بھٹو، وزیراعظم شہباز شریف اور وفاقی وزیر ہوا بازی کو مسلسل ٹیگ کرتے ہوئے درخواست کی جا رہی ہے کہ وہ سٹوڈنٹس کی آواز کو سنیں اور پی آئی اے کو ہدایات دیں کہ خصوصی پروازوں کے ذریعے پاکستانی سٹوڈنٹس کو واپس ان کی چینی یونیورسٹیز میں بھیجا جائے تاہم دوسری جانب تاحال ایک مجرمانہ خاموشی کے سوا کچھ نہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں